مارٹن کوبلرنے خیبرپختونخواہ حکومت کا پول کھول دیا

پشاور (نیوز ڈیسک) کے پی میں بنائی گئی ایک ہی لمبائی کی دوسڑکوں کو لے کر جرمن سفیر کی ٹوئیٹ نے کے پی حکومت کی شفافیت پر سوال اٹھا دیا۔تفصیلات کے مطابق پاکستان میں جرمنی سفیر مارٹن کوبلر ان چند غیر ملکی سفیروں میں سے ایک ہے جو پاکستانی عوام میں مقبول ہیں۔اس کی بڑی وجہ انکی پاکستان سے محبت اور پاکستانیوں سے لگاو ہے۔انکی محبت کا اندازہ اس بات سے بھی لگایا جا سکتا ہے کہ انہوں نے پاکستان میں تعیناتی کے بعد اردو بھی سیکھی اور وہ اکثر اردو میں ٹوئیٹ بھی کرتے ہیں۔ان کے ٹوئیٹ اکثر خبروں کی زینت بنتے رہتے ہیں تاہم ان کے تازہ ترین ٹوئیٹ نے ایک نئی بحث چھیڑ دی ہے۔ان کے ٹوئیٹ میں مبینہ طور پر خیبرپختونخواہ حکومت کی بد انتظامی کے حوالے سے بات کی گئی ہے۔انہوں نے اپنے

سوشل میڈیا اکاونٹ سے اپنی ایک سیلفی پوسٹ کی ہے جس میں وہ کسی نئی بنائی ہوئی سڑک پرکھڑے ہیں۔انکا کہنا تھا کہ ازاخیل کی اس روڈ کو دیکھئیے ، یہ روڈ یہاں کے مقامی افراد نے خود تعمیر کی ہے جبکہ اس کے لیے جرمن بینک کی جانب سے سرمایہ فراہم کیا گیا ہے۔انہوں نے بتایا کہ اس سڑک کی لمبائی ایک کلو میٹر جبکہ اس تہہ بارہ انچ کی ہے ،اس پر 4 ملین روپوں کی لاگت آئی ہے۔انہوں نے اس حوالے سے مزید کہا کہ خیبر پختونخواہ حکومت کی جانب سے اتنی ہی لمبائی کی ایک سڑک کو اس سے کم معیار میں سڑک 10 ملین روپے کی لاگت میں بنائی۔انہوں نے سوال اٹھایا کہ کیا کوئی بتا سکتا ہے کہ اس فرق کی وجہ کیا ہے۔ تحریک انصاف کی حکومت کے ناقدین اس ٹوئیٹ کو بنیاد بنا کر حکومت کو شدید تنقید کا نشانہ بنائیں گے۔