اب حکومت کو خیر باد کہنے کا وقت آگیاہے، اخترمینگل کا دھماکہ خیز اعلان، حکومت کیلئے نئی مشکل کھڑی ہوگئی

اسلام آباد(نیوز ڈیسک)بلوچستان نیشنل پارٹی کے سربراہ اختر مینگل کا کہنا ہے کہ حکومت ہمارے مطالبات پورے نہیں کر رہی اس لیے ہوسکتا ہے آنے والے دنوں میں حکومت کے ساتھ نہ رہیں۔پیپلزپارٹی وفد کی جانب سے بی این پی کے سربراہ اخترمینگل کو اپوزیشن اتحاد میں شامل کرنے کے لیے مذاکرات کیے گئے جس پر اخترمینگل نے اپوزیشن اتحاد میں شمولیت کے لیے اپنی شرائط رکھ دیں۔اختر مینگل کا کہنا تھا کہ پیپلزپارٹی کے سامنے بھی اپنے مطالبات رکھے ہیں، اپوزیشن ہماری شرائط مان لے اپوزیشن میں آنے کے لئے تیار ہیں، ہم نے حکومتی اتحاد میں شمولیت کے لیے وزارتیں یا کوئی فائدہ نہیں لیا، حکومت نے ہمارے مطالبات پرکوئی پیش رفت نہیں دکھائی، میرے مطالبات کی

حمایت کے لیے معاہدہ کیا جائے۔اختر مینگل نے کہا کہ لاپتہ افراد کی بازیابی کا مسئلہ حکومت کے سامنے رکھا، ہمارے مطالبات سیاسی اور ترقیاتی کاموں سے متعلق ہیں، حکومت ہمارے مطالبات پورے نہیں کر رہی، ہوسکتا ہے آنے والے دنوں میں حکومت کے ساتھ نہ رہیں، بلوچستان کا احساس محرومی ختم کرنے کیلئے حکومت قانون سازی کرے۔یاد رہے کہ گذشتہ روز پاکستان پیپلز پارٹی کے چئیرمین بلاول بھٹو زرداری نے حکومتی اتحادی بلوچستان نیشنل پارٹی (بی این پی) مینگل کی اپوزیشن میں شمولیت کی پیشکش پر مذاکرات کے لیے چار رکنی کمیٹی بنائی تھی۔ بی این پی مینگل سے مذاکرات کے لیے قائم کی جانے والی کمیٹی میں خورشید شاہ، نیئر بخاری، راجا پرویز اشرف اور فرحت اللہ بابر شامل ہیں۔جس کے بعد آج پیپلز پارٹی کے اعلیٰ سطحی وفد نے بلوچستان نیشنل پارٹی مینگل کے سربراہ اختر مینگل سے ملاقات کی جس میں انہیں اپوزیشن اتحاد میں شامل ہونے کی دعوت دی گئی۔ اختر مینگل نے اپوزیشن اتحاد میں شمولیت کی دعوت کو مشروط کر دیا اور کہا کہ حکومت نے ہمارے مطالبات پر کوئی پیش رفت نہیں دکھائی۔اگر آپ ہماری شرائط مان لیں تو ہم اپوزیشن کے اتحاد میں شمولیت اختیار کرنے کو تیار ہیں۔خیال رہے کہ پاکستان تحریک انصاف کی حکومت آنے کے بعد ہی حکومتی اتحادی جماعت بی این پی مینگل کی جانب سے حکومت کو کافی ٹف ٹائم دیا گیا ہے۔ تاہم اب بی این پی مینگل نے اپوزیشن اتحاد میں شامل ہونے کے لیے مشروط آمادگی ظاہر کرنے کے ساتھ ساتھ آئندہ دنوں میں حکومت کے ساتھ نہ رہنے کا عندیہ بھی دے دیا ہے جس سے موجودہ حکومت کو مزید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔