سپریم کورٹ کا بڑ افیصلہ، اہم رکن اسمبلی کو نااہل قرار دیدیا

کراچی(نیوز ڈیسک) سپریم کورٹ آف پاکستان نے رکنِ سندھ اسمبلی معظم علی کو نااہل قرار دیتے ہوئے پی ایس 11 لاڑکانہ 2 میں دوبارہ الیکشن کا حکم دے دیا ہے۔اس حوالے سے میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ سپریم کورٹ میں ندا کھوڑو بنام معظم علی انتخابی عذرداری کے کیس کی سماعت جسٹس عظمت سعید شیخ کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے کی،عدالت عظمی نے محفوظ شدہ فیصلہ سنایا۔جسٹس اعجازالاحسن نے فیصلہ پڑھ کر سنایا۔سپریم کورٹ نے پیپلز پارٹی کی رہنما ندا کھوڑو کی درخواست منظور کرلی اور سندھ ہائی کورٹ کا فیصلہ کالعدم قرار دیتے ہوئے پی ایس 11 لاڑکانہ 2 میں انتخاب کروانے کا حکم دیا ہے۔عدالت

عظمی نے الیکشن کمیشن کو معظم علی خان کو ڈی نوٹیفائی کرنے کا حکم بھی دے دیا ہے۔پاکستان پیپلز پارٹی کی امیدوار برائے صوبائی اسمبلی ندا کھوڑونے رکن سندھ اسمبلی معظم علی خان کے خلاف خلاف سپریم کورٹ میں الیکشن ٹربیونل کے فیصلے کے خلاف درخواست دائر کی تھی۔الیکشن ٹربیونل نے معظم علی خان کے خلاف جنوری 2019میں ندا کھوڑو کی درخواست مسترد کردی تھی ۔معظم علی خان حلقہ پی ایس 11 لاڑکانہ 2 سے جی ٹی اے کے ٹکٹ پر ممبر سندھ اسمبلی منتخب ہوئے تھے۔واضح رہے کہ ندا کھوڑا پاکستان پیپلز پارٹی کے سینئیر رہنما نثار احمد کھوڑا کی صاحبزادی ہیں۔گذشتہ عام انتخابات میں ندا کھوڑا حلقہ پی ایس 11 لاڑکانہ سے امیدوار تھیں۔جب ندا کھوڑا حلقے میں ووٹ مانگنے گئی تھیں تو لوگوں کی ایک بڑی تعداد نے انہیں گھیر لیا تھا۔لوگوں کا کہنا تھا کہ نثار احمد کھوڑو نے حلقے میں کوئی کام نہیں کیا اور اب ان کی صاحبزادی ووٹ مانگنے آ گئی ہیں۔ٹرانسفارمر خراب ہونے کی وجہ سے کئی ماہ سے ہمارے گھروں میں بجلی نہیں۔تاہم اب دیکھنا یہ ہے کہ اس حلقے کی عوام اب کی بار کسے منتخب کرتی ہے۔