مقبوجہ کشمیر پر حملہ پاکستان پر حملہ ہے، جنگ مودی نے شروع کی لیکن ختم اب ہم کرینگے

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) آزاد کشمیرکے صدر سردارمسعود خان نے کہا ہے کہ مودی نے جنگ شروع کی ہے اس کو ختم ہم کریں گے، مقبوضہ کشمیرپرحملہ دراصل پاکستان پرحملہ ہے، امن پسند دنیا کو بھارت کے خلاف لڑنا ہوگا۔ آزاد کشمیرکے صدر سردارمسعود خان نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مسئلہ کشمیرکا حل کثیرالجہتی سفارتکاری کے ذریعے ممکن ہے۔مقبوضہ کشمیرکے لوگوں کے پاس آٹا، پانی اورادویات ختم ہوچکی ہیں۔ صدرآزاد کشمیر نے کہا کہ مقبوضہ کشمیرپرحملہ دراصل پاکستان پرحملہ ہے۔ کشمیر پربھارتی قبضے کی کوشش کامیاب نہیں ہوگی۔ صدرآزاد کشمیرسردارمسعود خان نے کہا کہ امن پسند دنیا

کوبھارت کے خلاف لڑنا ہوگا۔ 5اگست کوکشمیرپر نہیں،پاکستان پرحملہ ہوا۔مودی نے جنگ شروع کی ہے اس کو ختم ہم کریں گے۔سردارمسعود خان نے کہا کہ بھارت کشمیریوں کواقلیت میں تبدیل کرنا چاہتا ہے۔ علاوہ ازیں صدر مملکت عارف علوی کا کہنا ہے کہ بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر میں کیے جانے والے غیر قانونی اقدامات کا اثر جنوبی ایشیا کی مجموعی سیکیورٹی پر ہوگا،پاکستان کا دفاع مضبوط ہاتھوں میں ہے ، مجھے افواج پاکستان پر فخر ہے، پاکستان مسئلہ کشمیر کے حل تک بھارتی مظالم کو ہر سطح پر اجاگر کرے گا۔بحری مشق شمشیر البحر VII اور ترسیل بحر II کی افتتاحی بریف کا کراچی میں انعقاد کیا گیا ،صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی تقریب کے مہمان خصوصی تھے۔ترجمان پاک بحریہ کے مطابق پاک بحریہ کی مشق شمشیر بحر ہر دو سال بعد منعقد کی جاتی ہے۔ترجمان پاک بحریہ نے بتایا کہ صدر مملکت کو پاک بحریہ کی جنگی اور آپریشنل تیاریوں پر بریفنگ دی گئی۔ ترجمان پاک بحریہ کے مطابق صدر مملکت نے بتایا کہ بھارت کی جانب سے مقبوضہ کشمیر میں کیے جانے والے غیر قانونی اقدامات کا اثر جنوبی ایشیا کی مجموعی سیکیورٹی پر ہوگا۔انہوں نے کہا کہ پاکستان مسئلہ کشمیر کے حل تک بھارتی مظالم کو ہر سطح پر اجاگر کرے گا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کا دفاع مضبوط ہاتھوں میں ہے اور مجھے افواج پاکستان پر فخر ہے۔ صدر پاکستان نے کہا کہ بھارت سی پیک اور گوادر پورٹ کے منصوبوں کو بھی نقصان پہنچانا چاہتا ہے ،پاکستان کی معاشی ترقی سمندر سے بلا تعطل تجارت پر منحصر ہے جس کے لیے پاک بحریہ کا کردار انتہائی اہمیت کا حامل ہے۔ ترجمان پاک بحریہ کے مطابق بحری مشق شمشیر بحر میں تینوں افواج اورمتعلقہ وزارتوں کے نمائندگان بھی شریک ہوں گے۔انہوں نے کہا کہ بحری مشق شمشیر بحر کا مقصد ایسے تصورات کو عملی طور پر جانچنا ہے جنہیں بعد ازیں ملکی بحری حکمت عملی کا حصہ بنایا جا سکے۔