کشمیری نوجوان لائن آف کنٹرول کو روندتے ہوئے بھارتی زیرقبضہ علاقے میں داخل

کوٹلی(ویب ڈیسک)آزادکشمیر کے نوجوانوں نے لائن آف کنٹرول کوروندتے ہوئے مقبوضہ علاقے میں کشمیری جھنڈا لہرا دیا۔تفصیلات کے مطابق آزادکشمیر میں کوٹلی ضلع کے نواحی علاقے چڑھوئی میں نوجوانوں نے سیز فائر لائن کو پاوں تلے روند ڈالااوربھارتی زیر قبضہ علاقے میں گھس کر ایک درخت پر کشمیری جھنڈا لہرا دیا۔ نوجوانوں کوبھارتی فوج کی جانب سے مزاحمت کا سامنا کرنا پڑا اور بھارتی فوج کی شیلنگ سے ایک نوجوان زخمی ہو گیا جسے ڈسٹرکٹ ہسپتال کوٹلی منتقل کر دیا گیا۔سوشل میڈیا پر جاری خبروں کے مطابق تاجران اور سول سوسائٹی کی کال پر کوٹلی کے علاقے چڑھوئی سے سیز فائر لائن کی طرف احتجاجی ریلی نکالی گئی جس میں

سینکڑوں افراد شریک ہوئے۔ آزادی مارچ کو پولیس نے مختلف جگہوں پر روکا، تاہم چار نوجوان تمام رکاوٹیں توڑ کر آگے نکل گئے اورسیز فائر لائن کی آخری حد ناونی کیری پہنچ گئے جہاں سے دو نوجوان پہرے پر رکے اور دو نوجوانوں نے سیز فائر لائن عبور کر کے چیل کے درخت پر کشمیری جھنڈا لگا دیا۔دو نوجوانوں کی طرف سے سیز فائر لائن روندنے پر بھارتی فوج نے فائرنگ شروع کر دی جس سے اٹھارہ سالہ نوجوان ملک حسنین خادم جو جونا کالونی کا رہائشی ہے، گولی لگنے سے زخمی ہو گیا۔ زخمی حالت میں ہی وہ اپنے دوسرے ساتھی کے ہمراہ آزادکشمیر کی حدود میں پہنچا جہاں اسے دیگر ساتھیوں نے ایمبولینس کے ذریعے ہسپتال پہنچا دیا۔