پاکستانی ڈرون کی بھارتی فضائی حدود میں پرواز، بھارتی حکام کی دوڑیں لگ گئیں

نئی دہلی (نیوز ڈیسک) جنگی جنون میں مبتلا بھارت نے پاکستان پر الزامات دھرنا شروع کر دئیے ہیں۔لائن آف کنٹرول پر گولہ باری اور بلا اشتعال فائرنگ کرنے والے بھارت نے پاکستان پر الزام عائد کیا ہے کہ پاکستانی ڈرون نے پنجاب پر پرواز کی ہے۔قومی اخبار میں شائع ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ بھارت نے الزام عائد کہ پاکستان کی طرف سے ایک ڈرون نے بھارتی پنجاب پر پرواز کی جس پر حکام نے علاقہ میں سرچ آپریشن شروع کر دیا۔حکام کے مطابق ڈرون نے پیر کی رات دس بجے سے پونے گیارہ بجے تک پرواز کی ہے۔جب کہ دوسری جانب بھارت لائن آف کنٹرول کی خلاف ورزی کر رہا ہے۔ پاکستان نے لائن آف

کنٹرول پر جنگ بندی کی بلا اشتعال خلاف ورزی پر بھارت سے سخت احتجاج کرتے ہوئے بھارتی ڈپٹی ہائی کمشنر کو دفتر خارجہ طلب کر کے احتجاجی مراسلہ ان کے حوالے کرتے ہوئے کہا ہے کہ بھارتی افواج کا بیگناہ شہریوں کو جان بوجھ کر نشانہ قابل مذمت عالمی انسانی حقوق ،قوانین کی خلاف ورزی ہے، خلاف ورزیاں کسی سنگین سٹریٹجک غلط فہمی کا باعث بن سکتی ہیں۔منگل کو دفتر خارجہ کے ڈی جی برائے جنوبی ایشیا ڈاکٹر محمد فیصل نے بھارتی ڈپٹی ہائی کمشنر گورو اہلووالیا کو طلب کیا اور لائن آف کنٹرول پر جنگ بندی کی بلا اشتعال خلاف ورزی پر سخت احتجاج کرتے ہوئے احتجاجی مراسلہ ان کے حوالے کیا۔ بھارتی افواج نے 6 اور 7 اکتوبر کو ایل او کے چری کوٹ سیکٹر پر بلااشتعال فائرنگ کی گئی جس سے 69 سالہ نذیراں بی بی شہید ہوئیں جبکہ 3 بیگناہ شہری زخمی بھی ہوئے، ترجمان دفتر خارجہ نے کہاکہ بھارتی افواج لائن آف کنٹرول پر تسلسل سے شہری آبادی کو خودکار اور بھاری اسلحہ سے نشانہ بنا رہی ہیں، بھارتی کی طرف سے 2017ء سے جنگ بندی کی خلاف ورزیوں میں تیزی آئی ہے، بھارت نے 2017ء میں 1970 مرتبہ جنگ بندی کی خلاف ورزی کی، بھارتی افواج کا بے گناہ شہریوں کے جان بوجھ کر نشانہ انتہائی قابل مذمت ہے اور بین الاقوامی انسانی حقوق اور قوانین کی خلاف ورزی ہے۔