آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع کیلئے آئین میں ترمیم کی ضرورت نہیں، بابراعوان

لاہور (نیوز ڈیسک) پاکستان تحریک انصاف کے رہنما بابر اعوان نے کہا ہے کہ آرمی چیف کی تقرری کے متعلق آئینی نہیں قانونی ترمیم ہوگی۔ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ آرمی ایکٹ میں ترمیم کے بعد قوانین بنائے جا سکتے ہیں اور سپریم کورٹ کے عبوری حکم میں پارلمنٹ کو بھی کہا گیا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ چیرمین سینٹ اور دیگر کی تعیناتی سے متعلق تو قانون میں لکھا ہے مگر یہ نہیں لکھا کہ کیا مراعات کیا لیں گے۔خیال رہے کہ سپریم کورٹ آف پاکستان نے وفاقی حکومت کو حکم دیا ہے کہ 6 ماہ میں آرمی چیف کی تقرری کے متعلق قانون سازی کی جائے۔عدالت نے ہدایت کی

ہے کہ آرمی چیف کی تقرری کا معاملہ پارلیمنٹ کے ذریعے آئین کی شق 243 کے تحت حل کیا جائے۔حکومت کی جانب سے سپریم کورٹ میں جمع کرائے گئے تحریری بیان حلفی میں درج ہے کہ حکومت آرٹیکل 243 کو مزید بہتر کرے گی، مذکورہ آرٹیکل میں میں تنخواہ، الاؤنس اور دیگر معاملات شامل کیے جائیں گے۔وفاقی حکومت نے بیان حلفی دیا ہے کہ وہ قانون سازی 6 ماہ میں مکمل کر لے گی۔ عدالت نے فیصلے میں لکھا کہ آرمی چیف28 نومبر2019 سے آئندہ چھ ماہ کیلئے عہدے پر رہ سکتے ہیں اور اس کے بعد معاملہ قانون کے مطابق حل ہوگا۔آرمی چیف آج سے مزید 6 ماہ کے لیے اپنے عہدے پر رہ سکتے ہیں۔