فاطمہ سہیل کے نام سے منسوب سوشل میڈیا پر گردش کرنیوالی غیراخلاقی ویڈیو کے کردار سامنےآگئے

لاہور (نیوز ڈیسک)سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی ویڈیو کے اصل کردار سامنے آگئے۔ فاطمہ سہیل نے ایک اسٹوری شئر کی ہے جس میں نازیبا ویڈیو میں فحش حرکات کرتے جوڑے کو بے نقاب کر دیا ہے۔ تصاویر شئر کرتے ہوے فاطمہ نے لکھا کہ “اب ان کا پیچھا چھوڑ دیا جاے”ان کا مزید کہنا تھا کہ “کوی بھی چیز شیئر کرنے سے پہلے تصدیق کر لینی چاہیے، کسی نے بہت اچھا پروپیگینڈا کیا مگر جھوٹ ہمیشہ جھوٹ رہتا ہے اور سچ ہمیشہ سامنے آکر ہی رہتا ہے۔ تصویر شیئر کرتے ہوئے فاطمہ سہیل نے کہا کہ اب میرا پیچھا چھوڑ دیا جائے۔کسی بھی چیز کو منسوب کرنے سے پہلے اس کہ تصدیق ضرور کرنی چاہیے۔

فاطمہ سہیل نے کہا کہ کسی نے بہت ہی اچھا پلان بنا کر پراپیگنڈا کرنے کی کوشش کی تاہم جھوٹ ہمیشہ جھوٹ رہتا ہے اور اس سے پردہ اٹھتا ہی ہے۔ یاد رہے اس سے قبل جمعہ کی شب سہیل فاطمہ نے اپنے انسٹاگرام اکاؤنٹ پر اس لیک ویڈیو کو جعلی قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ انہوں نے ایف آئی اے سے اس معاملے کی تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔انہوں نے لکھا ہے کہ ’ آج کل سوشل میڈیا پر مجھ سے منسوب ایک جعلی اور نازیبا لیک ویڈیو گردش کر رہی ہے جس سے میرا کوئی تعلق نہیں ہے۔ حیرت کی بات یہ ہے کہ ویڈیو میں نظر آنے والی خاتون سے میری کوئی مماثلت بھی نہیں ہے۔ میں نے ایف آئی اے سے اس ویڈیو کی تحقیقات کے لیے رابطہ کیا تھا جس کی فارنزک رپورٹ سے ثابت ہوا ہے کہ ویڈیو میں شامل خاتون کوئی اور ہے۔‘فاطمہ سہیل نے مزید کہا کہ ہم تحقیقات کر رہے ہیں اور جلد بتائیں گے کہ کس نے یہ جعلی ویڈیو مجھے بدنام کرنے کے لیے لیک کر دی ہے۔انہوں نے اپنے انسٹا گرام اکاؤنٹ پر ایف آئی اے کو دی گئی درخواست کا حوالہ دیتے ہوئے لکھا کہ میں یہ سوچ کر حیران ہوں کہ کوئی اس قدر بھی گر سکتا ہے۔ ایسے لوگوں کو سبق سیکھانا چاہیے تاکہ وہ کسی کو بدنام کرنے سے پہلے سو دفعہ سوچ لیں۔فاطمہ سہیل نے تحقیقات میں مدد پر ایف آئی اے کی تعریف کرتے ہوئے لکھا ہے کہ خدا کا شکر ہے ہمارے پاس سائبر کرائم ونگ جیسا ادارہ ہے جس کے بغیر میں اپنے دعووں کی توثیق کرنے کے لیے کیا کرتیں؟