مشتاق منہاس کی مقبولیت میں کمی ،پارٹی کے وزرا نے بھی آنکھیں پھیر لیں

اسلام آباد (پی کے نیوز ) وزیر اطلاعات آزاد کشمیر راجہ مشتاق منہاس کی باغ میں عوامی مقبولیت میں کمی ،اپنی پارٹی کے وزرا نے بھی آنکھیں پھیر لیں ،اہم اجتماعوں میں خطاب کا موقع تک دینے سے گریز ،ذرائع کے مطابق باغ میں ڈسٹرکٹ کمپلیکس کے افتتاح کے دوران ہونے والے پروگرام میں بھی مشتاق منہاس کو سبق سیکھانے کے لیے خطاب کرنے کا موقع نہیں دیا گیا ،عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ باغ میں پروگرام کا جب آغاز ہوا تو مقامی وزیر سردار میر اکبر خان خود اسٹیج سیکرٹری کے فرائض سر انجام دینے لگے اور اپنی بات کرنے کے بعد وقت کی کمی کو جواز بنا کر وزیراعظم آزاد کشمیر کو خطاب کا موقع دیا جس پر

وہاں موجود لوگ حیران ہو گئے کہ مشتاق منہاس کو موقع کیوں نہیں دیا گیا ،جس پر میر اکبر خان کے چند قریبی لوگوں نے انسے پوچھا کہ مشتاق منہاس کو خطاب کا موقع کیوں نہیں دیا گیا تو میر اکبر نے کہا کہ مشتاق منہاس کو کیوں خطاب کا موقع دیتا اس نے اس پروگرام کو منعقد کرنے میں کیا کردار ادا کیا جو میں موقع دیتا پروگرام کو کامیاب کرانے کے لیے میں ایک ہفتے سے خوار ہو رہا ہوں اب سٹیج بنا کر انکو دیدوں میں بیوقوف تھوڑا ہی ہوں ،دوسری جانب ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ سردار میر اکبر خان کی باغ کے تمام سرکاری اداروں پر مظبوط گرپ ہے جسکی وجہ سے باغ میں مشتاق منہاس کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑھ رہا ہے جبکہ اپنے ووٹرز کی امیدوں پر پورا نہ اترنے پر دن بدن مقبولیت میں بھی کمی واقع ہو رہی ہے۔ذرائع کا یہ کہنا ہے کہ مشتاق منہاس کی مقبولیت میں کمی کی ایک بڑی وجہ ہوائی اعلانات کے غبارے سے ہوا نکلنابھی ہے کیوں کہ مشتاق منہاس نے سابق وزیراعظم نواز شریف سے جدید امراض قلب کے ہستپال کی منظوری کا اعلان کرایا تھا لیکن الیکشن کے بعد وہ اعلان صرف اعلان ہی رہا اور تین سال گزرنے کے باوجود وہ اپنی حکومت سے وہ منصوبہ شروع نہ کرا سکے نہ ہی باغ کی تعمیر و ترقی کے لیے کوئی خاطر خواہ اقدامات کیے ،زرائع کا کہنا ہے کہ جدید امراض قلب کا ہسپتال بنانے میں ناکامی پر یونٹ کے نام پر بھی عوام کو ماموں بنانے کی کوشش کی گئی لیکن عوام نے اس ڈرامے کو پذیرائی نہیں دی ۔