مسلم لیگ (ن) آزاد کشمیر کے اہم رہنماوں کا تحریک انصاف میں شمولیت کا امکان

اسلام آباد( شیراز راٹھور )مسلم لیگ ن آزاد کشمیر کے اہم رہنماوں کا تحریک انصاف میں شمولیت کا امکان، ن لیگ کے یہ راہنما ماضی میں سیاسی جماعتیں بدلنے میں اپنا ثانی نہیں رکھتے ،ماضی قریب نے ان راہنماؤں نے ان ہاوس تبدیلی کے لیے ہوم ورک مکمل کیا تھا مگر کامیابی نہیں ملی ،ن لیگ کے یہ راہنما مقتدر قوتوں کی گڈ بک میں شامل ہونے کے لیے کسی بھی حد تک جانے کے لیے ہر وقت اپنے گلے سیل فار کا بورڈ لٹکائے رہتے ہیں مسلم کانفرنس کو توڑنے میں ان لوگوں کا کلیدی کردار تھا تفصیلات کے مطابق آزاد کشمیر میں جوں جوں انتخابات کا وقت قریب آ رہا ہے ن لیگ کے رہنماء نئے گھونسلوں کی طرف اعلان

بھرنے کو تیار ہیں ذرائع کے مطابق ن لیگ میں چار کا یہ ٹولہ حکمران جماعت کے پیر کرنے میں سازشوں میں مصروف ہیں، ماضی قریب میں چار کے اس ٹولے نے مقتدر قوتوں کی آشیر باد سے ان ہاوس تبدیلی کے لیے ہوم ورک مکمکل کیا تھا مگر عین لمحے پر “دل کے ارمان آنسو میں بہہ گئے ” کہ پرانی تنخواہ پر کام کرنے لگے ۔ نواز شریف کی احتساب عدالت میں پیشی کے موقع پر ان لوگوں کا احتساب عدالت جانا تو دور ہمدردی کے دو بول بھی نہ بول سکے ۔کسی بھی جلسے یا جلوس میں ان لوگوں نے شرکت نہیں کی یار لوگوں کی تنقید پر ان لوگوں کا کہنا تھا کہ ہمیں اوپر سے آرڈر نہیں ملا ۔ بدلتے حالات کے پیش نظر چار کا یہ ٹولہ ن لیگ آزاد کشمیر کی قیادت کو اعتماد میں لیے بغیر بالا ہی بالا تحریک انصاف کے رہنماوں سے معاملات یک سو کرنے میں مصروف ہیں تاکہ ان کا آنے والا وقت بھی اقتدار میں گزرے۔ فاروق حیدر گروپ تحریک انصاف کا راستہ روکنے کے مسلم کانفرنس سے انتخابی اتحاد کے حوالے سے سنجیدگی سے غور و فکر کر رہا ہے ذرائع نے دعوی کیا کہ سردار عتیق کی بیرون ملک سے وطن واپسی پر ملاقات کر کے لاہحہ عمل کو حتمی شکل دی جائے گی جبکہ دوسری طرف پیپلز پارٹی بھی اندرون خانہ اختلافات کا شکار ہے پارٹی کے اندر جاٹ گوجر لڑائی عروج پر ہے جاے گروپ بہر صورت پارٹی قیادت گوجر گروپ سے چھیننا چاہتا ہے اس سلسلے میں بات گروپ کے سرکردہ رہنما اندرون خانہ پارٹی چیرمین بلاول بھٹو زرداری کو یہ باور کروا رہے ہیں کہ پیپلز پارٹی کو بچانا ہے تو پارٹی قیادت جاٹ گروپ کے حوالے کی حوالے جائے ۔