حکومت ایم کیو ایم کو منانے کیلئے آدھا بجٹ دینے کو تیار

کراچی (نیوز ڈیسک) رہنما ایم کیو ایم کا بطور وزیر مستعفی ہونے کے بعد حکومتی وفد کی ایم کیو ایم کو منانے کیلئے ملاقات بہادر آباد میں کی گئی۔ ملاقات کے بعد رہنما ایم کیو ایم اور تحریک انصاف کی جانب سے مشترکہ پریس کانفرنس کی گئی ۔ پریس کانفرنس کے دوران اسد عمر کا کہا کہ کسی مذاکرات کیلئے نہیں آئے جو ایجنڈا ایم کیو ایم کا ہے وہی ہمارا ہے۔آج کی جانے والی ملاقات پیچھلے ہفتے سے طے تھی۔ ملاقات میں ایم کیو ایم کو کراچی میں جاری منصوبوں سے آگاہ کیا۔ اسد عمر نے ایم کیو ایم کو یقین دہانی کراتے ہوئے کہا کہ کے فور منصوبے کیلئے آدھا بجٹ دینے کو تیار ہیں۔ کراچی میں 162 روپے سے زائد کے منصوبے لگائے جائیں گے۔ ہماری خواہش ہے کہ خالد مقبول صدیقی کابینہ کا حصہ رہیں۔نوکریوں کے حوالے سے تبصرہ کرتے ہوئے اسد عمر نے

کہا کہ وزیراعظم نے کبھی نہیں کہا کہ نوکریاں سرکار دے گی۔اسد عمر نے مزید گفتگو کرتے ہوئے کہا چھوٹے منصوبوں کی پلاننگ اور تکمیل میں وقت لگتا ہے ۔ صاف پانی اور ٹرانسپورٹ کراچی کے سب سے بڑے مسئلے ہیں ان کا کہنا تھا کہ کوشش ہے کراچی کیلئے مل کر کام کریں ۔ وزیراعظم جلد کراچی کا دورہ کریں گے۔ اسد عمر کی گفتگو پر ردعمل دیتے ہوئے رہنما ایم کیو ایم خالد مقبول صدیقی نے کہا کہ کابینہ میں نہ بیٹھنے کے فیصلے پر قائم ہیں۔ کراچی میں جاری منصوبوں کی تکمیل کے بعد حکومت کو بڑی خوشخبری سنا دیں گے۔واضح رہے رہنما تحریک انصاف اسد عمر کی سربراہی میں حکومتی وفد ایم کیوایم کو منانے کیلئے کراچی بہادر آباد پہنچی تھی۔ جس کے بعد رہنما ایم کیو ایم خالد مقبول صدیقی نے کابینہ میں بیٹھنے سے انکار کر دیا۔