ترمیمی بل کی حمایت کا فیصلہ نواز شریف کی مشاورت سےہوا یا نہیں ہوا،لیگی رہنما نے خود ہی بتادیا

لاہور(نیوز ڈیسک) پاکستان مسلم لیگ ن کے مرکزی رہنماء جاوید لطیف نے کہا ہے کہ پارٹی میں چوہدری نثار کی کچھ باقیات موجود ہیں، ترمیمی بل کی حمایت کا حتمی فیصلہ نوازشریف کی مشاورت سے نہیں ہوا،ترمیمی بل کی حمایت کا فیصلہ پارٹی رہنماؤں کے لندن پہچنے سے پہلے ہی ہوگیا تھا۔ انہوں نے نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ اس میں کوئی صداقت نہیں کہ آرمی ایکٹ ترمیمی بل کی حمایت کے فیصلے میں نوازشریف کی مشاورت شامل تھی، بلکہ آرمی ایکٹ میں ترمیم کی حمایت کا فیصلہ نوازشریف کی مشاورت سے نہیں کیا گیا۔انہوں نے کہا کہ جب آرمی ایکٹ ترمیمی بل میں حمایت کا فیصلہ پارٹی رہنماؤں کے لندن پہنچنے سے پہلے ہی ہوچکا تھا۔ ابھی بھی پارٹی میں چوہدری نثار کی باقیات موجود ہیں، یہ باقیات ملک کے اندر موجود ہیں۔ایک کھیل کھیلا

جا رہا ہے۔ کچھ لوگ شاہ سے زیادہ شاہ کے وفاداربن رہے ہیں۔ضروری تھا کہ تمام حالات سے پارٹی قائد کو آگاہ کیا جاتا۔ انہوں نے کہا کہ مریم نواز اپنے والد نواز شریف کی صحت کی وجہ سے خاموش ہیں۔ان کو اپنے ہی گھر میں یرغمال بنا لیا گیا ہے۔ ان کا کسی پارٹی عہدیدار سے بھی رابطہ نہیں ہے۔ دوسری جانب ن لیگ میں اس حوالے سے تشویش پائی جارہی ہے کہ پارٹی نے اچانک حمایت کا فیصلہ کیسے کرلیا؟ پارلیمانی پارٹی نے سینئر رہنماء خواجہ آصف سے سخت سوالات کیے تھے کہ ووٹ کو عزت دو کا نعرہ کہاں گیا؟ اب عوام کو کیا جواب دیں گے، جس پر خواجہ آصف نے یقین دلایا تھا کہ میں تو صرف نواز شریف کا پیغام دے رہا ہوں، یہ پارٹی کا متفقہ فیصلہ ہے، فیصلہ نوازشریف کی مشاورت سے کیا گیا ہے۔ لیکن پارٹی رہنماؤں نے اس پیغام کو مناسب نہ سمجھا۔