میر اکبر کی مشتاق منہاس کیخلاف بڑی سیاسی چال

مظفرآباد(پی کے نیوز)وزیر جنگلات سردار میر اکبر کی مشتاق منہاس کیخلاف بڑی سیاسی چال،سردار میر اکبر باغ کے دونوں حلقوں میں اپنی گرفت مضبوط کرنے کے لیے وسطی باغ سے اپنے بھانجے میجر قیوم کو سیاست میں لانے کا فیصلہ کر لیا ہے ، ذرائع کے مطابق وزیر جنگلات سردار میر اکبر خان شروع دن سے وزیر اطلاعات مشتاق منہاس کو حقارت کی نظر سے دیکھتے ہیں اور انکے درمیان رابطہ نہ ہونے کے برابر ہے میر اکبر نے ضلع باغ کے اکثر معاملات میں مشتاق منہاس کو کھڈے لائین لگا رکھا ہے لیکن اب انکے آرگنائزر بننے کے بعد مشتاق منہاس کو حلقے میں کمزور کرنے کے لیے راولپنڈی کے معروف بزنس مین اور

انکے بھانجے میجر ریٹائرڈ سردار قیوم کو عملی سیاست میں لانے کا منصوبہ بنایا ہے،ذرائع کے مطابق میجر قیوم نے میر اکبر کی آشیرباد سے حلقے میں اپنی برادری کے سرکردہ رہنماؤں سے رابطے بھی شروع کر دیئے ہیں،دوسری جانب نارمہ ببرادری کے نوجوان سیاسی لیڈر جو مشتاق منہاس کو باغ لے کر آہے راجہ خضر رفیق وہ بھی مشتاق منہاس سے نالاں ہیں اور جلد سیاسی مستقبل کا فیصلہ کریں گے، ذرائع کا کہنا ہے کہ مشتاق منہاس نے الیکشن کمپین کے دوران دعویٰ کیا تھا جیتا تو وزیراعظم بنوں گا اور ہارا تو صدر لیکن جیتنے کے بعد ڈھنگ کی وزارت بھی نہ مل سکی اس وجہ سے بھی حلقے کے عوام مشتاق منہاس سے خوش نہیں ہیں، سیاسی مبصرین میجر قیوم کی سیاست میں انٹری کو مشتاق منہاس کے لیے خطرہ قرار دے رہے ہیں کیونکہ کہ مشتاق منہاس کا حلقہ میں اپنی برادری کا ووٹ صرف 4 ہزار کے قریب ہے اور انکی جیت کی وجہ قمر الزمان سے نالاں ملدیال برادری کے لوگ ہی ہیں، میجر ریٹائرڈ قیوم کی سیاست میں انٹری کی وجہ سے قمر الزمان سے ناراض ہو کر مشتاق منہاس کے ساتھ جانے والےلوگ بھی میجر قیوم کے قافلے شامل ہو جائیں گے،کیونکہ طاہر اقبال کی صورت میں ملدیال برادری کو قمر الزمان کی متبادل قیادت ملی لیکن مشتاق منہاس کے ساتھ ن لیگ میں شمولیت کے بعد اب حلقے میں طاہر اقبال کا بھی وہ مقام نہیں رہا اور خود بھی طاہر اقبال غیر فعال ہیں، سیاسی مبصرین کے مطابق وسطی حلقے کی تاریخ پر نظر دوڑائی جائے تو اس حلقے کی عوام نے کم ہی دوسری بار کسی کو موقع دیا ہے اور حلقے میں ہمیشہ وہی جیتا جو پہلی بار الیکشن کے عمل میں آیا۔