بھارت نے اقوام متحدہ کے سربراہ کی مسئلہ کشمیر پر ثالثی کی پیشکش مسترد کردی

اسلام آباد(نیوز ڈیسک)بھارت نے اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو گوتریس کی جانب سے مسئلہ کشمیر پر ثالثی کی پیش کش کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ ‘تیسرے فریق کے ثالثی کی کوئی گنجائش نہیں ہے’۔یاد رہے کہ انتونیو گوتریس نے یہ پیش کش ایک روز قبل اسلام آباد میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کے ساتھ مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کی تھی اور اقوام متحدہ کے سربراہ نے سلامتی کونسل کی قراردادوں کا احترام کرتے ہوئے مسئلہ کشمیر کے حل کا مطالبہ کیا تھا۔انہوں نے ثالث کی حیثیت سے اپنے کردار کی پیش کش کرتے ہوئے کہا تھا کہ اس مقصد کے لیے ان کے ‘اچھے دفاتر’ استعمال کیے جاسکتے ہیں، پاکستان اور بھارت کے تعلقات پر تبادلہ خیال کرتے ہوئے انہوں نے عسکری و زبانی کشیدگی کو کم

کرنے کی ضرورت پر زور بھی دیا تھا۔بھارتی اخبار دی ہندو کی رپورٹ کے مطابق بھارت نے ان کی اس پیشکش کو گزشتہ رات مسترد کیا تھا۔رپورٹ کے مطابق بھارت کی وزارت امور خارجہ کے ترجمان رویش کمار نے دعوٰی کیا کہ ‘(جموں و کشمیر) کے مسئلے پر جس کو توجہ دینے کی ضرورت ہے وہ غیر قانونی اور زبردستی پاکستان کے زیر قبضہ علاقوں کو چھڑانے کا ہے، مزید امور اگر کوئی ہے تو دو طرفہ بحث کی جائے گی، تیسرے فریق کے ثالثی کا کوئی کردار یا گنجائش نہیں ہے’۔دی ہندو کے مطابق رویش کمار کا کہنا تھا کہ ‘بھارت کو امید ہے کہ انتونیو گوتریش بھارت کے خلاف سرحد پار سے ہونے والی دہشت گردی کے خاتمے کے لیے قابل اعتبار مستقل اور ناقابل واپسی اقدام اٹھانے پر زور دیں گے’۔