بارہ کہو میں کوروناوائرس کے کیسز میں تشویشناک حد تک اضافہ

اسلام آباد(نیوز ڈیسک)اسلام آباد کے علاقے بہارہ کہو میں کرونا وائرس کے مزید کیسز سامنے آنے کے باعث آرمی نے علاقہ مکمل سیل کر دیا۔حکام کے مطابق اس سے قبل ضلعی انتظامیہ نے تبلیغی جماعت کے متعدد افراد میں پیر 23 مارچ کو کرونا وائرس کی تشخیص ہونے کے بعد بہارہ کہو کے کوٹ ہتھیال میں لوگوں کی نقل و حرکت پر مکمل پابندی عائد کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔تاہم، قومی وزارت صحت نے کیسز کی تصدیق نہیں کی ہے۔ وزارت صحت کا کہنا تھا کہ کیسز پمز میں رپورٹ کیے جاتے ہیں، پھر وہ این آئی ایچ جاتے ہیں اور این آئی ایچ حتمی رپورٹ وزارت صحت کو بھیجتی ہے۔ این آئی ایچ کے چیف ڈاکٹر سلمان کا کہنا تھا کہ

کیسز کی تفصیلات سے متعلق وہ فی الحال لاعلم ہیں۔بدھ 25 مارچ کو پاک آرمی نے علاقے کا کنٹرول سنبھالتے ہوئے اعلان کیا کہ علاقہ فوری کلیئر کریں کیونکہ کرونا کی وبا پھیل چکی ہے۔ تمام شہری فوری گھروں کو جائیں کیونکہ حکومتی احکامات پر علاقہ سیل کر رہے ہیں۔اسلام آباد پولیس کے ایک عہدیدار نےمیڈیا کو بتایا کہ بہارہ کہو کے علاقے میں واقع ایک مسجد میں مقیم تبلیغی جماعت کے تقریبا 11 افراد میں کرونا وائرس کا ٹیسٹ آیا اس لیے ہم کوٹ ہتھیال کے علاقے میں مکمل لاک ڈاؤن کر رہے ہیں۔ایک اور پولیس اہلکار کے مطابق تبلیغی جماعت کے افراد نے علاقے کے درجنوں لوگوں سے ملاقات کی تھی جنہیں اب آئیسولیشن وارڈز میں منتقل کر دیا گیا۔انہوں نے کہا کہ ’’ایک غیر ملکی بھی اس گروپ کا حصہ تھا جس کا ٹیسٹ مثبت آیا تھا۔ ہم نے پورے علاقے کو قرنطینہ میں تبدیل کر دیا ہے اور اب تمام افراد کے ٹیسٹ کیے جائیں گے‘‘۔واضح رہے کہ اتوار 22 مارچ کو فسطینی حکام کی جانب سے غزہ میں پہلی مرتبہ کرونا وائرس کے دو واقعات کی تصدیق ہوئی تھی۔ غزہ کی وزارت صحت کے مطابق پاکستان سے واپسی پر دونوں افراد کے ٹیسٹ مثبت آئے تھے۔