پاکستان میں کوروناوائرس سے کتنے کروڑ افراد کی نوکریاں خطرے میں پڑگئیں

اسلام آباد (نیوز ڈیسک)کورونا وائرس کے باعث لاک ڈاؤن ، مخلف شعبوں کے ایک کروڑ 80 لاکھ ملازمین کی ملازمت خطرے میں پڑ گئی۔ تفصیلات کے مطابق ایک رپورٹ میں خبردار کیا گیا ہے کہ لاک ڈاؤن کے پیش نظر ایک کروڑ 80 لاکھ افراد اپنی ملازمت سے عارضی یا جزوی طور پر فارغ کئے جا سکتے ہیں۔ دی نیوز کی ایک رپورٹ میں پلاننگ کمشن کے تھنک ٹینک سے تعلق رکھنے والے تین نامور ماہر معاشیات اور پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف ڈویلپمنٹ اکنامکس جن میں ڈاکٹر نااصر، نسیم فراز اور محمود خالد شامل ہیں۔انہوں نے اپنے ایک تحقیقی مقالے میں دعویٰ کیا ہے کہ لاک ڈاؤن کے باعث بڑی تعداد میں لوگوں کے روزگار کو

خطرہ ہے ۔ انہوں نے ؂اپنے مقالے کو تین مرحلوں میں تقسیم کیا گیا ہے ۔ بتایا گیا ہے کہ پہلے مرحلے میں 20 ارب ، دوسرے مرحلے میں 186ارب روپے، تیسرے مرحلہ میں 260 ارب کا نقصان اٹھانا پڑے گا۔جس کا بوجھ کمزور معیشت پر پڑے گا۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ملک میں سیاحت اور برآمدات میں کمی کے باعث بھی بوجھ بڑھ جائے گا اس صورتحال کو کنٹرول کرنے کیلئے حکومت کو چاہئے کہ اپنے تمام وسائل کو بروکار لائے اور اس وائرس پر قابو پائے ورنہ اس کےاثرات نچلے طبقے کی ملازمت پر اثر انداز ہونگے۔واضح رہے پاکستان میں کورونا وائرس کے 18 مریض مکمل صحت یاب ہو گئے، ملک بھر میں کورونا وائرس کے کیسز تعداد 972 ہو گئی، 7 افراد جاں بحق ہو گئے۔ پاکستان میں کورونا وائرس کے بڑھتے ہوئے کیسز کے ساتھ ساتھ ایک خوش کن خبر بھی سامنے آئی ہے جس کے تحت ملک میں کورونا وائرس کے شکار 18 افراد مکمل صحت یاب ہو چکے ہیں۔ اس قبل نینشل کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹر نے بتایا تھا کہ ملک بھر میں کورونا وائرس کیسز کی تعداد میں اضافہ ہو گیا ہے۔نیشنل کمانڈ اینڈ کنٹرول سنٹر کے کورونا وائرس کے تازہ ترین اعداد و شمار کے مطابق ملک میں کورونا وائرس کیسز کی تعداد 972 تک پہنچ گئی۔ مزید تفصیلات کے مطابق سندھ میں کورونا وائرس کے کیسز کی تعداد 407، پنجاب میں 281، بلوچستان میں 110، گلگت بلتستان میں 80، خیبر پختونخوا میں 78، اسلام آباد میں 15 جبکہ آزاد کشمیر میں ایک کیس رپورٹ ہوا ہے۔